راولپنڈی اسلام آباد یونین آف جرنلسٹس کی سوشل میڈیا کے ذریعے خواتین صحافیوں کے ساتھ بدسلوکی اور ہراساں کرنے کی شدید مذمت

راولپنڈی اسلام آباد یونین آف جرنلسٹس کے صدر شکیل احمد نے سوشل میڈیا پر خواتین صحافیوں کو ہراساں کرنے کے بڑھتے ہوئے واقعات کی شدید مذمت اور تشویش کا اظہار کیا۔انہوں نے مزید کہا کہ خواتین صحافی میڈیا کا اہم حصہ اور بہت مضبوط آواز ہیں اور ہم ان کی آواز کو کسی بھی صورت میں دبانے نہیں دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ وفاقی حکومت کو ترجیحی بنیادوں پر اس رجحان کی حوصلہ شکنی کے لیے فوری اقدامات کرنے کی ضرورت ہے۔ ایک بیان میں، یونین آف جرنلسٹس اس معاملے پر اپنے موقف میں بالکل واضح ہے اور کسی کو بھی ہماری خواتین ساتھیوں کی تذلیل کرنے کی اجازت نہیں ہے۔ اگر کوئی قصوروار پایا جائے تو اسے سزا دی جائے اور تاحیات پابندی لگائی جائے۔صدر آر آئی یو جے شکیل احمد نے کہا ہے کہ ہالینڈ میں وقاص گورائیہ نامی شخص نے جویریہ صدیق سمیت سینئر صحافیوں کو ہراساں کرنے اور ان کی تذلیل کا رجحان شروع کر دیا ہے اور اس سے قبل سمیرا خان، مونا خان، شفا یوسفزئی، انعم الٰہی، سحر، فریحہ ادریس، غریدہ فاروقی شامل ہیں۔ بشریٰ عامر، عنبرین فاطمہ، ثنا توصیف، سنتھیا رچی، ملیحہ ہاشمی اور دیگر کو سوشل میڈیا پر ہراساں کیا جاتا ہے۔ وقاص گورائیہ نے اپنے تضحیک آمیز کلمات، برے الفاظ کے علاوہ خواتین صحافیوں کے ساتھ بدسلوکی اور ہراساں کرنے کا سلسلہ جاری رکھا ہوا ہے جو نہ صرف قابل مذمت بلکہ سزا کے مستحق ہیں۔اظہار رائے کی آزادی صحافیوں کے ساتھ ساتھ ہر شہری کا بنیادی حق ہے لیکن گالی گلوچ اور کردار کشی کی اجازت نہیں ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ فرحت فاطمہ، طاہر نے بھی اس وحشیانہ فعل کی مذمت کی۔

Spread the love