تشدد کے حامی ڈاکٹر اللہ نذر بلوچ بلوچستان کی ترقی کے خلاف کیوں ہیں ؟

بلوچستان لبریشن فرنٹ (بی ایل ایف) کے سربراہ ڈاکٹر اللہ نذر بلوچ نے ایک متنازعہ انٹرویو دیا ہے جس کا اگرمختلف پہلوؤں اور زمینی حقائق کے مطابق کا تجزیہ کیا جا ئے تو حقیقت بر عکس ہے۔
دعوی 1: بی ایل اے کے سربراہ نے دعوی کیا کہ بالخصوص بلوچ نوجوان اور عام طور پر آبادی ریاست کے خلاف تحریک کی حمایت کر رہے ہیں
۔زمینی حقا ئق: ٹیکنا لوجی کے معاملے اور تعلیم تک رسائی میں اضافہ کی بدولت آج بلوچ نوجوان زیادہ تعلیم یافتہ ہیں۔ نیز ریاست کے ذریعہ صحت کے شعبے کے اقدامات سے صوبے کے عوام کو زبردست راحت ملی ہے۔ اس سے نہ صرف نوجوانوں کے علیحدگی پسند تحریک سے دور ہونے کے تناظر میں تبدیلی لائی گئی ہے بلکہ ایسی علیحدگی پسند تحریکوں کے رہنماؤں کے جھوٹے دعوے پر بھی شکوک پیدا ہوا ہے۔

دعوی 2: بی ایل ایف چیف کا دعویٰ ہے کہ بلوچوں نے موجودہ انتخابی عمل کو کبھی بھی ایک منصفانہ عمل نہیں سمجھا ہے اور اس لئے حکومت کے زیر اہتمام امیدواروں کو اقتدار کے اہم عہدوں پر منتخب کرنے کے طریقے کو مسترد کردیا ہے۔
زمینی حقائق: ڈاکٹرز ایسوسی ایشن کی صوبائی ہڑتال اور صوبے میں امن وامان کی عام صورتحال کے باوجود ، بلوچ ووٹروں نے 2018 کے انتخابات میں ملک کے دوسرے صوبوں کی طرح اسی جوش و جذبے کے ساتھ حصہ لیا۔ یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ بی ایل اے چیف کے آبائی ضلع آواران میں ، صوبائی اور قومی اسمبلی دونوں انتخابات میں 30 سے ​​زیادہ امیدوار کھڑے ہوئے تھے۔ نیز انتخابات میں کافی تعداد میں ووٹرز نے حصہ لیا۔ بلوچ آبادی نے تربت ، کوہلو ، پنجگور اور آواران میں بی ایل ایف کے خلاف ریلی نکالی۔ ان سب سے نہ صرف یہ حقیقت سامنے آتی ہے کہ بلوچ تحریک کے علیحدگی پسند پروپیگنڈے کو مسترد کرتے ہیں۔

دعوی 3: بی ایل ایف چیف کا دعویٰ ہے کہ بلوچستان کے عام لوگوں نے اپنے وجود کی حفاظت کے لئے بڑی قربانیاں دی ہیں۔
زمینی حقائق: کسی بھی ملک کے عام لوگوں کو دوسرے نسلوں سے مقابلہ کرنے کے طریقے سے خطرہ نہیں ہے ، لیکن کسی بھی نسل کو اصل خطرہ رہنماؤں اور کارکنوں کے ذریعہ لاحق ہے جو رجعت پسندانہ اور ترقی پسندی کے بیانیہ کو فروغ دیتے ہیں۔ جو قوم وقت کی ضروریات کو نہیں سمجھتی اور ریاست کی تعلیم اور دیگر ترقیاتی پالیسوں کی اپیل کو نظرانداز نہیں کرتی وہ کامیاب نہیں ہوسکتی ہے۔ ریاست کے پیش کردہ ان ترقیاتی اقدامات کا فائدہ اٹھائے بغیر ، ایک نسل خود بخود متروک ہوجائے گی اور اس کے وجود کو خطرے میں ڈال دے گی۔

شیئر کریں