مہمند: صوبائی حکومت قبا ئلی اضلاع کی ترقی پر خصوصی توجہ دے رہی ہے،صوبائی وزیر شکیل احمد

مہمند:خیبرپختونخوا کے وزیر برائے محکمہ آبنوشی شکیل احمد خان نے وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان کی ہدایت پر قبائلی ضلع مہمند کا دورہ کیا۔ دورے کے موقع پر انھوں نے ضلع مہمند کے ڈپٹی کمشنر عارف اللہ اعوان اور ایم این اے ساجد مہمند کے ہمراہ خویزئی بائیزئی کے بھائی ڈاک کمپلیکس میں ضلع مہمند کے قبائلی عمائدین اور مشران کے ہمراہ مشاورتی اجلاس کا انعقاد کیا۔اجلاس میں ایڈیشنل ڈپٹی کمشنرز، اسسٹنٹ کمشنرز اور متعلقہ محکموں کے اعلی حکام نے شرکت کی۔ مشاورتی اجلاس میں صوبائی وزیر کو ضلع مہمند میں مختلف محکموں کی طرف سے جاری اور نئے منصوبوں پر بریفنگ دی گئی اور علاقہ عمائدین نے صوبائی وزیر کو اپنے مسائل سے آگاہ۔تقریب سے خطاب کرتے ہوئے صوبائی وزیر آبنوشی شکیل احمد خان نے کہا کہ موجودہ صوبائی حکومت ضم اضلاع کی ترقی پر خصوصی توجہ دے رہی ہے اور اس سلسلے میں ضم اضلاع کے عوام کو انضمام کے ثمرات کی فوری فراہمی کے لیے تمام صوبائی محکموں کو ان اضلاع تک توسیع دی گئی ہے۔انہوں نے کہا کہ یہاں پر جتنے بھی منصوبے جاری ہیں سب میرٹ کی بنیاد پر شروع کئے گئے ہیں اور ان کی مکمل نگرانی کی جاتی ہے کیونکہ عوام کو بنیادی سہولیات کی فراہمی حکومت کی اولین ذمہ داریوں میں شامل ہیں ۔صوبائی وزیر نے کہا کہ قومیں تعلیم سے ترقی کرتی ہیں اور موجودہ صوبائی حکومت نے ضم اضلاع میں نہ صرف سینکڑوں نئے سکول تعمیر کیے بلکہ سکولوں کو اپ گریڈ بھی کیا گیا، نئے اساتذہ بھرتی کی بھرتی کے علاوہ ضرورت کے مطابق بذریعہ پیرنٹس ٹیچرز کونسل مزید اساتذہ بھی بھرتی کیے جا رہے ہیں۔تا کہ ضم اضلاع کی شرح خواندگی کو مزید بہتر بنایا جا سکے۔ انہوں نے کہا کہ ضلع مہمند میں سیکنڈ شفٹ سکول پروگرام اور بندوبستی اضلاع میں جاری دیگر منصوبوں کا ضلع مہمند تک توسیع کے لئے وزیر تعلیم اور وزیراعلی خیبر پختونخوا سے بات کروں گا۔ شکیل احمد خان نے مزید کہا کہ سابقہ ادوار میں ملک کو بے دردی سے لوٹا گیا اور اداروں کو کمزور بنایا گیا جس کی وجہ سے عوام کی معاشی اور سماجی زندگی متاثر ہوئی مگر پاکستان تحریک انصاف انصاف میرٹ کی بالا دستی اور اداروں کی مضبوطی پر یقین رکھتی ہے۔ صوبائی وزیر شکیل احمد خان نے قبائلی عمائدین کو یقین دلایا کہ آپ کے تمام مسائل کے حوالے سے وزیر اعلی خیبر پختونخوا محمود خان اور متعلقہ وزراء سے بات کروں گا اور ان مسائل کے حل کے لیے ہر ممکن اقدامات کئے جائیں گے۔ صوبائی وزیر نے بھائی ڈاک کمپلیکس میں پانی کی فراہمی کے منصوبے کا اعلان بھی کیا اور ڈپٹی کمشنر کو اس کمپلیکس کو مزید فعال کرنے اور ضلعی انتظامیہ کے مزید افسران بشمول دیگر محکموں کے حکام کے یہاں دفاتر منتقل کرنے کی ہدایت کی تاکہ خویزئی بائیزئی کے عوام کو گھر کی دہلیز پر ہی تمام سہولیات میسر ہو۔شکیل خان نے علاقہ مشران کو یقین دلایا کہ اس علاقے میں آٹا فراہمی کے کوٹے میں اضافے، نادرا آفس کی یہاں تک توسیع، رورل ہیلتھ سنٹر کو مزید فعال بنانے اور ڈاکٹر کی فراہمی بشمول دیگر جملہ مسائل بہت جلد حل کیے جائیں گے۔ شکیل احمد خان نے نے ڈپٹی کمشنر مہمند اور متعلقہ لائن ڈیپارٹمنٹس کے حکام کو ہدایت کی کہ جتنی بھی خالی اسامیاں ہیں ان پر جلد از جلد بھرتیاں مکمل کریں اور لوکل کوٹہ کے مطابق آسامیوں پر صرف لوکل امیدوار تعینات کیے جائیں۔اور جو بھی ملازم جس بھی محکمے کا ہو اگر ڈیوٹی نہیں کرتا ان کے خلاف کارروائی کریں۔ انہوں نے کہا کہ خوئیزء میں ریسکیو 1122 ایمرجنسی سروسز اور سٹیزن فیسیلیٹیشن سینٹر کے قیام کے لیے لئے جلد ازجلد اقدامات کیے جائیں گے۔ شکیل احمد خان نے ضلع مہمند کے پبلک ہیلتھ انجینئرنگ ڈیپارٹمنٹ میں مزید عملے کی تعیناتی کے لیے موقع پر احکامات جاری کرتے ہوئے یکہ غنڈ تا غلنئی 14 کلومیٹر روڈ کو جلد از جلد مکمل کرنے کی ہدایت بھی کی۔ شکیل احمد خان نے ڈپٹی کمشنر کو سٹوڈنٹ ٹیچر شرح کے مطابق اور اساتذہ کو جلد از جلد ضرورت کے مطابق ٹرانسفر کرنے کی ہدایت کی ۔صوبائی وزیر شکیل احمد خان نے نے ایکسیئن پبلک ہیلتھ انجینئرنگ مہمند کو تمام سکیموں کی فعالیت کو بھی یقینی بنانے کی ہدایت کی دورے کے موقع پر صوبائی وزیر نے بھائی ڈاک حویزئی بائیزئی میں پودا لگا کر شجر کاری مہم اور بچوں کو پولیو کے قطرے پلا کر ضلع مہمند میں پولیو مہم کا آغاز کر دیا۔شکیل احمد خان نے 89 کروڑ روپے کی لاگت سے بننے والے سرو کلے تا یکہ غنڈ واٹر سپلائی سکیم کا معائنہ بھی کیاجو ٹیسٹنگ کے مراحل میں ہے۔ جس سے تقریبا پانچ ہزار خاندانوں کو پینے کا صاف پانی میسر ہوگا۔ ایکسیئن پبلک ہیلتھ انجینئرنگ مہمند اور ان کی ٹیم نے صوبائی وزیر کو منصوبے بارے بریفنگ بھی دی۔ صوبائی وزیر پبلک ہیلتھ انجینئرنگ شکیل احمد خان نے ضلع مہمند کے علاقوں میں پانی کے مسائل پر قابو پانے کیلئے کابل ریور سورس سے واٹر سپلائی منصوبے پر پیش رفت اور فیزیبلٹی بارے اجلاس پشاور میں اگلے ہفتے منعقد کرنے کی ہدایت کی۔

Spread the love