کیا وائس آف امریکہ خود بھی انڈین کرونیکل کا حصّہ ہے؟

بین الاقوامی ادارے ای یو ڈس انفو لیب کا انڈین کرونیکل کو بے نقاب کرنے کے بعد بہت سی دیگر انکشافات سامنے آنا شروع ہوگئی ہیں۔ ای یو ڈس انفو لیب نے اپنی رپورٹ میں یہ تحقیق پیش کی ہے کہ انڈیا پاکستان میں فنڈڈ تحریکیں چلاتی ہیں۔ اور ان تحریکوں میں پی ٹی ایم بھی شامل ہیں۔ جس کا مقصد پاکستان اور اس کے اداروں کی ساکھ کو نقصان پہنچانا ہے۔ تحقیق میں کہا گیا کہ انڈین کرونیکل میں چلنے والی پی ٹی ایم جیسی تحریکوں کی تشہیر فنڈڈ میڈیا کے ذریعے کی جاتی ہے۔ اس تہلکہ خیز تحقیق کے بعد ایک اور انکشاف سامنے آگیا۔ کہ جب بھی انڈین کرونیکل کی فنڈڈ تنظیم پی ٹی ایم اپنے جلسے کرتی ہے، تب وائس آف امریکہ ان جلسوں کی تشہیر کے لئے موجود ہوتی ہے۔ اس بات کا اقرار محسن داوڑ نے خود کیا تھا۔ اور وائس آف امریکہ کو پی ٹی ایم کا دوست قرار دیا۔دوسری طرف وائس آف امریکہ ہمیشہ سے انڈین کرونیکل کی تنظیم پی ٹی ایم کے جھوٹے پراپیگنڈے پھیلا نے میں پیش پیش رہی ہے۔ جس تحریک کو بین الاقوامی ادارے نے انڈین کرونیکل کا حصّہ قرار دیا۔ وائس آف امریکہ خود اس تحریک کی تشہیر کرتی ہے۔ وائس آف امریکہ کیوں انڈین کرونیکل کے تنظیم کی تشہیر کرتی ہے؟ کیا یہ اس بات کا ثبوت ہے کہ وائس آف امریکہ خود بھی انڈین کرونیکل کا حصّہ ہے؟دوسری طرف یورپین پارلیمنٹ نے خود انڈین کرونیکل پروگرام کا نوٹس لے لیا ہے۔ انڈیا اور اس کی تنظیم پی ٹی ایم کا مکروہ چہرہ تو بے نقاب ہو گیا ہے۔ اب جلد ہی ان کے دیگر حامی بھی بے نقاب ہوجائنگے۔

شیئر کریں